امریکہ و فرانس کے صدور نے ایران سے نئے جوہری منصوبہ کا اشارہ دیدیا

امریکہ و فرانس کے صدور نے ایران سے نئے جوہری منصوبہ کا اشارہ دیدیا


24 نیوز: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور فرانسیسی ہم منصب ایمانیول میکرون نے ایران سے نئے جوہری معاہدہ کرنے کی جانب اشارہ دیا ہے۔

واشگنٹن کے دورہ پر آئے فرانسیسی صدر ایمانیول میکرون نے امریکی ہم منصب ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کی جس کے دوران 2015 میں ہونے والے ایران سے جوہری معاہدہ کے خاتمہ اور نئے معاہدہ پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں: شمالی کوریا کا میزائل تجربات روکنے کا اعلان

ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ ہم بہت بڑا کچھ کرنے جارہے ہیں اور شاید یہ ایران سے معاہدہ بھی ہوسکتا ہے تاہم کوئی بھی نیا معاہدہ مضبوط بنیاد پر ہو گا۔

امریکی صدر نے عالمی طاقتوں اور ایران کے درمیان 2015 میں ہونے والے جوہری معاہدہ کو پاگل پن قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس معاہدہ میں یمن، شام اور مشرق وسطیٰ کے دیگر حصے شامل کیے جانے چاہیے تھے۔

پڑھنا نہ بھولیں: امریکہ کاشام پر حملہ، برطانیہ و فرانس کی حمایت، محرکات کیا تھے؟

ٹرمپ کو ایران اور عالمی طاقتوں کے درمیان ہونے والے جوہری معاہدہ کی توسیع 12 مئی کو کرنا ہے تاہم وہ کہہ چکے ہیں کہ اس معاہدہ کی توثیق نہیں کی جائے گی۔

دوسری جانب ایران نے دھمکی دی ہے کہ اگر امریکہ نے معاہدہ منسوخ کیا تو اس کے سنگین نتائج بھگتنا ہوں گے۔ جب کہ ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف کہہ چکے ہیں کہ اگر امریکہ معاہدہ سے پھرا تو وہ یورینئم افزودگی کا حق محفوظ رکھتا ہے۔