چائلڈ پورنوگرافی کیس: ملزم سعادت امین کو سات سال قید، 12لاکھ جرمانہ

چائلڈ پورنوگرافی کیس: ملزم سعادت امین کو سات سال قید، 12لاکھ جرمانہ


 24نیوز:بچوں کوجنسی تشدد کانشانہ اوروڈیو بنانے کے پہلے کیس کا فیصلہ ہوگیا۔ سرگودھا سے گرفتارسعادت امین کولاہورکی عدالت نے سات سال قید اور بارہ لاکھ روپے جرمانہ کی سزاسنادی گئی۔

 تفصیلات کے مطابق بچوں کو جنسی تشدد کا نشانہ اور ویڈیو بنانے کے پہلے کیس کا فیصلہ ہوگیا۔ سرگودھا سے گرفتار سعادت امین کے خلاف فیصلہ سنایا گیا۔  سعادت امین کے خلاف نور وے کے سفارتخانے کی جانب سے درخواست دی گئی تھی۔ ملزم سے ساڑھے 6 لاکھ نازیبا تصاویر اور ویڈیو برآمد ہوئی تھیں۔ ملزم بین الاقوامی سطح پر سویڈن، اٹلی، امریکہ اور انگلینڈ میں تصاویر اور ویڈیوز فراہم کرتا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:نقیب قتل کیس کی جے آئی ٹی رپورٹ تیار، راؤ انوار ماورائے عدالت قتل کے ذمہ دار قرار
 
سائبر کرائم جج نے ایف آئی اے کی تفتیش پر ملزم کے خلاف فیصلہ سنایا۔ ملزم کو 7 سال قید اور 12 لاکھ روپے جرمانہ کیا گیا ہے۔دوسری جانب کراچی میں سات سالہ بچے کواغواکرنے والے ملزم کواے وی سی سی پولیس نے گرفتارکرلیا۔ ملزم نےبچے کے والدین سے پانچ لاکھ روپے تاوان طلب کیا تھا۔کراچی میں سات سالہ بچے کو اغوا کرنے والا ملزم دھرلیا گیا۔ پولیس کے مطابق ملزم لیاقت کاکڑ صدر میں ہوٹل پر پراٹھے بناتا ہے جسے دو روز قبل سپر ہائی وے سے تاوان وصول کرتےہوئے رنگے ہاتھوں گرفتار کیا گیا۔

پڑھنا نہ بھولیں:تین خاوندوں کی ایک بیوی یا کچھ اور، حیرت انگیز سچ سامنے آگیا

ملزم نے سات سالہ عیسی کو پریڈی کے علاقے سے اغوا کیا۔ ملزمان نے رہائی کے عوض پانچ لاکھ روپے تاوان کا مطالبہ کیا۔ ملزم نے بتایا کہ عیسی ہر روز پراٹھے لینے ہوٹل آتا تھا پہلے اس سے دوستی کی اور پھر بعد میں اسے اغوا کرلیا۔ پولیس کے مطابق ملزم نے ساتھی کے ہمراہ بچے کو حیدرآباد لطیف آباد میں رکھا اور خود تاوان لینے آیا۔پولیس نے اپنے پیغام میں کہا ہے کہ والدین اپنے بچوں پر نظر رکھیں اور اجنبیوں سے دوستی کرنے سے منع کریں۔