افغانستان میں امریکہ کیلئے نیا خطرہ

افغانستان میں امریکہ کیلئے نیا خطرہ


واشنگٹن(24نیوز)افغانستان میں تعمیرِ نو کی سرگرمیوں کے نگران امریکہ کے خصوصی انسپکٹر جنرل جان سوپکو نے افغانستان کے مستقبل کے حؤالے سے تشویشناک تجزیہ دیا ہے،امریکا کے افغانستان سے انخلا اور افغان حکومت کی امداد میں بڑی کٹوتی کی صورت امریکا ، خطے اور دنیا کو امریکی سینئر اہلکار کی زبانی کن چیلنجز کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

 امریکی اعلی افسر انسپکٹر جنرل جان سوپکو کا کہنا ہے کہ قیامِ امن کے لیے کیا جانے والا کوئی بھی معاہدہ جنگ  کےشکار افغانستان کی صورتِ حال کو مزید پیچیدہ کرسکتا ہے جس سے وہ تمام پیش رفت ضائع ہوسکتی ہے جو اب تک افغانستان کی تعمیرِ نو کے سلسلے میں بین الاقوامی برداری نے کی ہے۔

انہوں نے خدشات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ معاہدے کی جلد بازی تباہ کن ثابت ہو سکتی ہے، جس سےعالمی برادری کی طرف سے افغانستان پر خرچ کیے10 کھرب ڈالر ضائع ہونے کا خطرہ ہے ، افغان حکومت کو دی جانے والی مالی امداد میں بہت زیادہ کٹوتی سے افغان حکومت گر سکتی ہے اور افغان فوج اور دیگر سکیورٹی فورسز کو تنخواہیں نہ ملیں تو دنیا کو افغان فوج اور پولیس کے پانچ لاکھ ایسے اہلکاروں سے نبٹنے کا چیلنج درپیش ہوگا جو تربیت یافتہ اور مسلح ہوں گے۔

ضرور پڑھیں:انکشاف15 جون 2016

سوپکو کا کہنا تھا کہ افغانستان میں لگ بھگ 60 ہزار طالبان جنگجو پہلے ہی موجود ہیں جو تربیت یافتہ قاتل ہیں اور ایسی صورت میں وہ مزید منظم ہوسکتے ہیں۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer