پنجاب کی جیلوں میں ایڈز کے ڈیرے

پنجاب کی جیلوں میں ایڈز کے ڈیرے


24نیوز : پنجاب کی جیلوں میں ایڈز کے مریض قیدیوں کی تعداد بڑھنے لگی، جس سے دوسرے قیدیوں کی زندگیاں بھی داؤپر لگ گئیں ہیں۔

پنجاب کی جیلوں میں 480 قیدیوں میں ایڈز کے مرض کی تصدیق ہوئی، انچارج نیشنل ایڈز کنٹرول پروگرام کا کہنا ہے کہ قیدیوں کے علاج کیلئے کام کررہے ہیں۔ پنجاب کی جیلوں میں مختلف بیماریوں میں مبتلا مریضوں کے حوالے سے تہلکہ خیز انکشافات سامنے آگئے، جیلوں میں سکریننگ کے بعد سامنے آنے والی رپورٹ کے مطابق 480 قیدیوں کے ایڈز ٹیسٹ پازیٹو آئے ہیں۔

پنجاب کی 38 جیلوں میں سے 34 جیلوں میں قیدیوں کی سکریننگ کی گئی، جہاں480 قیدیوں میں ایڈز وائرس کی تصدیق ہوئی، آڈیالہ جیل میں3925 قیدیوں کی سکریننگ کی گئی جہاں 29 قیدی ایڈز سے متاثرہ ہیں۔ رپورٹ کے مطابق ہیپاٹائٹس سی سے 2717 قیدی متاثر ہیں جبکہ 299 قیدی ہیپاٹائٹس بی کے مریض نکلے، اڈیالہ جیل میں ہیپاٹائٹس سی کے131 اور ہیپاٹائٹس بی کے 34 قیدی سزا کاٹ رہے ہیں، سفلس وائرس سے796 قیدی متاثر ہیں جن میں سے 30 اڈیالہ جیل میں ہیں۔

اس حوالے سےآئی جی جیل خانہ جات سے رابطہ کیا گیا تو انہوں جواب دینے سے انکارکردیا، دوسری جانب نیشنل ایڈز کنٹرول پروگرام کے انچارج ڈاکٹر بصیر کہتے ہیں کہ بیماریوں میں مبتلا قیدیوں کے علاج کیلیے صوبائی حکومت کے ساتھ ملکر کام کررہے ہیں۔ ڈسٹرکٹ جیل وہاڑی، بہاولپور، بہاول نگرمیں قیدیوں کی سکرینگ نہیں کی گئی، جبکہ سپریم کورٹ کے حکم کے باوجود ایڈز ، ہیپاٹائٹس، سفلس وائرس میں مبتلا قیدیوں کے لیے الگ انتطامات نہ کیے جاسکے جس سے دیگر قیدیوں کی کو بھی خطرات لاحق ہوگئے ہیں۔