برملا کہتا ہوں، عدالتوں کے فیصلے نہیں مانتا: نواز شریف


لاہور (24 نیوز) پاکستان مسلم لیگ ن کے قائد محمد نواز شریف نے کہا ہے کہ ملک کے آئین کو چھوڑ کر ایک فوجی آمر کا حلف لینا سب سے بڑا جرم ہے۔ نواز شریف کو جو سزا دی گئی ہے یہ تو اس کا 100واں حصہ بھی نہیں جتنا کہ پی سی او کے تحت حلف لینے کا جرم ہے۔ ایسے جج ہمارے خلاف فیصلے دیں اور ہم سر تسلیم خم کر لیں، ایسا نہیں ہو سکتا۔

نواز شریف نے ماڈل ٹاؤن میں مجلس عاملہ  کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  تاریخ کو قبر میں دفن نہیں کیا جاسکتا۔ 70 سال سے اس ملک میں منتخب وزیراعظم کو کام نہیں کرنے دیا جا رہا ہے، یہ صورتحال جاری رہی تو ملک کیسے چلے گا۔

انہوں نے کہا کہ 6 ماہ سے زائد عرصہ ہوگیا ہے لیکن اب تک انکےخلاف ایک دھیلے کی بھی کرپشن ثابت نہیں ہوئی۔ اس کے باوجود منتخب وزیراعظم کو نااہل قرار دے کر کارمملکت چلانے کا حق چھین لیا گیا۔ اسی طرح جماعت کی سربراہی سے بھی روک دیا گیا ہے۔ ایسی صورتحال میں عدالتی فیصلوں پر رد عمل دے کر انہوں نے کیا غلط کیا ہے۔

نواز شریف نے کہا کہ آپ پی سی او کے تحت حلف لیتے آؤ ہم آپ کے فیصلوں کی تعظیم کرتے رہیں، برملا کہتا ہوں کہ ان فیصلوں کو نہیں مانتے۔ انہوں نے کہا کہ سب سے بڑی سیاسی جماعت کو سینٹ انتخابات سے باہر کر دیا گیا، سیاستدان آسان ہدف ہیں، آپ آمروں کوہاتھ نہیں لگاتے، نیب نے براہ راست انکے خلاف کوئی کیس نہیں بنایا۔