انکوائری کیلئے بلایا گیا تو ضرور جاﺅں گا:وزیر اعلیٰ سندھ

انکوائری کیلئے بلایا گیا تو ضرور جاﺅں گا:وزیر اعلیٰ سندھ


کراچی ( 24نیوز ) وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے آج سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار سے ان کے چیمبر میں ملاقات کی، جس کے دوران منی لانڈرنگ کیس کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی کی شکایات سمیت صوبے کے مسائل پر بات چیت ہوئی۔
واضح رہے کہ جسٹس ثاقب نثار نے گذشتہ روز مراد علی شاہ کو اپنے چیمبر میں ملاقات کے لیے بلوایا تھا۔ رپورٹس سامنے آئی تھیں کہ چیف جسٹس نے منی لانڈرنگ کیس کے سلسلے میں جے آئی ٹی کی جانب سے عدم تعاون کی شکایت پر وزیراعلیٰ سندھ کو بلایا تھا،چیف جسٹس کے چیمبر میں ہونے والی اس ملاقات میں ایڈووکیٹ جنرل سندھ، چیف سیکریٹری اور دیگر حکام بھی شریک ہوئے۔
ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو میں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے بتایا کہ چیف جسٹس سے ملاقات کافی اچھی رہی، جس کے دوران صوبے کے مسائل پر بات ہوئی،چیف جسٹس نے مجھے وزیراعلیٰ بننے پر مبارکباد دی اور کہا کہ سندھ کے عوام نے اعتماد کیا ہے،ہمارے کچھ مسائل تھے، جن سے چیف جسٹس کو آگاہ کیا گیا۔
انہوں نے منی لانڈرنگ کیس کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی کی شکایات کے حوالے سے بھی چیف جسٹس کو بتایا،ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ 'معلومات دینا اداروں کا کام ہے، وزیراعلیٰ کا نہیں۔
وزیراعلیٰ سندھ کے مطابق جے آئی ٹی نے ایری گیشن، ورکس اینڈ سروسز ڈپارٹمنٹ سے تفصیلات مانگی تھیں اور اس کے لیے 2 دن دیئے گئے تھے، اتنے وقت میں اتنا سارا دیٹا کیسے دیا جاسکتا ہے، ایسا تھوڑی ہوتا ہے کہ ایک بٹن دباو¿ اور ریکارڈ مل جائے۔مراد علی شاہ کا مزید کہنا تھا کہ 'اگر مجھے انکوائری کیلئے بلایا گیا تو ضرور جاﺅں گا-
وزیراعلیٰ نے بتایا کہ چیف جسٹس نے کہا کہ کراچی کے ہسپتال خیبرپختونخوا سے بہتر نظر آئے۔