کراچی کو بنی گالا سے چلانے کی اجاز ت نہیں دیں گے: بلاول بھٹو


کراچی (24 نیوز)  چئیرمین بلاول بھٹو جلسہ سے خطاب کررہے ہیں، ایم کیو ایم کے گڑھ لیاقت آباد میں پیپلزپارٹی کا پنڈال سج گیا، جیالوں کاجوش وخروش عروج پر، جلسہ گاہ میں لوگوں کی بڑی تعداد موجود ہے۔

تفصیلات کے مطابق بلاول بھٹو نے اپنے خطاب میں کہا کہ لیاقت آباد میں پہلے نفرت کانعرہ لگایا جاتاتھا، میرے سامنے ان لوگوں کی تصاویر ہیں جنہوں نے شہادت دی۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ ہزاروں شہداء نے ظلم کی فضا میں پیپلز پارٹی کا پرچم تھامے رکھا،  پیپلزپارٹی کے ہزاروں شہداء کے لیے نعرہ لگاتا ہوں، یہ وہ کراچی ہے جہاں میں پیدا ہوا۔

 بلاول بھٹو کا مزید کہنا ہے  کہ یہ کراچی وہ کراچی ہے جہاں میں پیدا ہوا، جہاں میں پہلی سانس لی، جہاں میں اپنی ماں کی طرح ابتدائی تعلیم حاصل کی، یہ کراچی ہمارا کراچی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ میں امجد صابری کی والدہ اور بھائی کا شکر گزار ہو  کہ انہوں نے ہمارے جلسہ میں خصوصی شرکت کی۔ بلاول بھٹو کا امجد علی صابری کی یاد میں قوالی انسٹیوٹ قائم کرنے کا اعلان کیا۔

بلاول بھٹو نےدہشتگردی میں شہید ہونے والے شہدا کی شہادت کو سلام پیش کیا۔ انہوں نے کہاکہ جیالوں کو گھروں میں گھس کر جلا دیا گیا،  انکو مارا گیا، مگر دیکھ لو ہم فنا نہیں ہوئے، کیونکہ بھٹو جیالے تقدیر کا وہ پرندہ ہے جو اپنی ہی راکھ سے پیدا ہوتے ہیں۔ آج تیسری نسل کا بھٹو پھر آپکے سامنے کھڑا ہے۔ کراچی میں 30 سالوں  میں جو ہوا ، وہ آپکے سامنے ہے ، مگراب حالات بدل گئے ہیں۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی امن پسند جماعت ہے، ہم نے امن کا پہلا مرحلہ قائم کرلیا ہے، باقی امن قائم کرنے کیلئے پولیس کے محکمہ کو فعال کرنا ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے کراچی کو انگلینڈ کے چنگل سے بچایا ہے۔ الطاف حسین کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انکا کہنا ہے کہ الطاف حسین بھی غلط ہے اور اسکے ساتھ چلنے والے بھی غلط ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ سسٹم ہی برا ہے جس نے الطاف حسین کو بنایا۔ وہ سسٹم اور لوگ بھی گندھے ہیں جنہوں نے الطاف حسین کو تو چھوڑ دیا مگراسکی سیاست نہیں چھوڑی۔

انہوں نے مزید کہا کہ کراچی کااچھا وہ ہی سوچ سکتا ہے ، جو کراچی سے محبت کرتا ہو، کراچی میں پیدا ہوا ہو، جس کی دو نسلیں کراچی میں گذری ہو، جاؤ اپنے بڑوں سے پوچھو انہوں نے کس طرح پاکستان پیپلز پارٹی کا ساتھ دیا۔ 

انکا مزید کہنا ہے کہ نیو کراچی والوں کے بڑوں نے بھی ہمیشہ پیپلز پارٹی کا ساتھ دیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کراچی میرا گھر ہے، کراچی میری سانسوں میں بستا ہے، کراچی ہی میر ی پہچان ہے، کراچی جل رہا تھا ، کراچی میں بدامنی تھی، ہم نے کسی پرا لزام تراشی کی بجائے کراچی میں امن قائم کیا، اور اسکے لیڈر وزیراعلیٰ سندھ تھے، انہوں نے کہا جب امن ہوگیاتو سب نے اپنے نام اعزاز جوڑلیا۔

بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ مستقل امن قائم کرنے کیلئے ہمیں اچھے اداروں کی ضرورت ہے، اچھی پولیس کی ضرورت ہے، اچھا عدلیہ کا نظام چاہیے، اچھے لوگ چاہیے، پھر ہی کراچی میں ترقی کی جاسکتی ہے۔

انکا مزید کہنا ہے کہ مشرف کہ دور میں کراچی پر ایم کیو ایم مسلط تھی، پانی کے مسئلہ کو حل نہیں کیا گیا ، اسے بھی پیپلز پارٹی حل کررہی ہے۔ ایم کیو ایم والے کہتے ہے ووٹ ہمیں دو مگرکام پیپلز پارٹی والے کرینگے۔ کراچی والوں ووٹ ہمیں دوں ووٹ ملنے کے بعد فرق یہ پڑے گا کہ ترقی کے راستہ میں کوئی مسئلہ نہیں ہوگا، کراچی میں سے کچرا صاف ہوا تو متحدہ بھی صاف ہوجائے گی۔

انکا مزید کہنا ہے کہ کراچی کا ووٹ لینے والوں نے کراچی کو کبھی کچھ نہیں دیا، مگر پیپلز پارٹی نے ہمشہ کراچی کیلئے کام کیا ہے۔

بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ ہم پورے کراچی کو صاف کرنا چاہتے ہیں۔ ایم کیوایم صفائی کے ادارے کو کام نہیں کرنے دیتی ۔ ایم کیو ایم کچرا صاف نہیں کرنے دیتی کیونکہ یہ بھی ساتھ ہی صاف ہوجائے گئے۔ انہوں کہا کہ بجٹ میں سب سے زیادہ روپے کراچی کے لیے رکھا تھا، کیونکہ ہم جانتے تھےایم کیوایم والے کراچی کو کچھ نہیں دینگے۔ 

انہوں نےمئیر لاہور سے سوال کرتے ہوئے کہا کہ آپکو اربوں دیا وہ سب کہا اڑا دیا، کراچی میں سے گند کیوں نہیں ختم کیا۔

ہم نے کراچی میں ترقیاتی کام کیے، آج ایشیاء کا سب سے بڑا دل کا ہسپتال کراچی میں ہے۔ جس میں علاج بالکل مفت ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں آپ سے وعدہ کرتا ہوں نے عباسی شہید کو بھی ایک بہتر ہسپتال بناؤں گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں یہ نہیں کہتا کہ ہم نہ سب کچھ 100 فیصدکردیا ہے، مگر جو بھی کیا صرف ہم نے ہی کیا ہے۔ کراچی کی ایک الطاف سے جان چھٹی ہے۔

انہوں نےعمران خان کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ہم دوسرا الطاف حسین عمران خان کی شکل میں پیدا نہیں ہونےدینگے۔ عمران خان الطاف حسین کا عکس ہے۔ دونوں نے ہی کراچی میں نفرت پھلائی۔ ایک ہڑتالیں کرتا ہے تو دوسرا دھرنے دیتا ہے۔ عمران خان کے ایک طرف نااہل اور دوسرا خٹک کھڑا ہو، تو ترقی کیسے ہوگی۔

عمران خان اب ایک نیا نعرہ لے آیا ہے، دو نہیں ایک پاکستان ، بلاول بھٹو نے کہا کہ عمران خان آپ عوام کو بے وقوف سمجھتےہیں؟ عمران خان آپ کیا ترقی کرینگے آپ تو کے پی کے میں ایک سرکاری ہسپتال نے بنا سکے۔ آپ تب کہاں تھے جب پشاور میں معصوم بچوں کی جان گئی۔ تب آپ امپئیر کی انگلی پر ناچ رہے تھے۔

انہوں نے نواز شریف کو آڑے لیتے ہوئے کہا کہ نواز شریف وعدے کراچی والوں سے کرتے ہیں اور جاتے ٹھٹہ ہیں۔نواز شریف کراچی سے وعدہ کرکے تکمیل کہیں اور کرتے ہیں۔  نواز شریف کراچی کو روشن کیا کرے گا جو رہی سہی بجلی کراچی میں آتی تھی وہ بھی کراچی سے چھین لی۔ کراچی والوں سے گیس بھی چھین لی۔ 

انہوں نے کہا کہ امن کے شہر میں انہوں نے دہشت گردی کو پھیلا دیا ہے۔ تعلیم کے گڑھ شہر انہوں نے کتابوں کی جگہ بھتہ کی پرچیاں ہاتھ میں پکڑا دی۔

انہوں نے مزید کہا کہ کراچی کو نیویارک بنانے والوں پہلے گوالمنڈی کے گٹر تو صاف کرلو۔ میاں صاحب اگر آپ کراچی کے ووٹ کی عزت کرتے تو آپکو عزت ملتی۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ میں کراچی کا بیٹاہوں ، آپکا دکھ میرا دکھ ہے،کراچی کی ترقی میں سب سے زیادہ مجھے خوشی ہوگئی۔ کیونکہ میں جانتا ہوں کراچی کی ترقی سے پاکستان کی ترقی جڑی ہے۔ 

بلاول بھٹو نے کراچی کی عوام سے وعدہ لیا کہ آپ میر ے ساتھ کھڑے ہے ؟ میں آپکو تعلیم دونگا، صعنت دونگا، کراچی کو رشن کردوں گا، انہوں نے کارکنوں کو کہا میرے بازو بنوں میرا ساتھ دوں اور میر ے ساتھ ملکر کراچی کو ترقی دو۔ 

اس سے پہلے جلسہ سے خطاب میں سابق چیئرمین سینیٹ رضا ربانی نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے کارکنوں کو گلیوں میں مارا جاتا تھا۔ ہم نے ہمشہ صبر کیا اور لاشیں اٹھائیں مگر کراچی کی روشنیوں کو کبھی ختم نہیں ہونے دیا ہے۔

سابق چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ موجودہ حکومت نے عوام دشمن بجٹ دیا ہے۔ یہ بجٹ موٹے موٹے پیٹ رکھنے والے تاجروں کا بجٹ ہے، یہ بجٹ کارپوریٹ بجٹ ہے، پیپلز پارٹی اسے رد کرتی ہے۔

رہنما پیپلز پارٹی نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے ہمیشہ جدوجہد کی ہے اور اب بھی جدوجہد کرے گی۔ رضا ربانی نے کہا کہ کوئی کہتا ہے میں تبدیلی لارہا ہوں، کونسی اور کیسی تبدیلی لارہےہو؟ انہوں نے کہا کہ ’موجودہ حکومت سرمایہ داروں کی حکومت ہے۔ موجودہ حکومت نے کراچی اور سندھ کا کبھی نہیں سوچا۔

سابق وزیرا علیٰ سندھ قائم علی شاہ کا تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  ہم عوام کی خدمت کررہے ہیں۔  ہم نے تھوڑے عرصہ میں کراچی میں امن قائم کردیا ہے۔  بتاوآپ لوگوں نے کراچی کیلئے کیا کیا۔ کراچی کی عوام کو سلام پیش کرتاہوں۔

اس سے قبل وزیر اعلی سندھ نے جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کراچی میں تمام ترقیاتی کام پیپلزپارٹی کی حکومت میں ہوئے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کراچی والے پیپلز پارٹی کا ساتھ دیں ہم مزید کراچی میں مزید ترقی کرینگے۔

انہوں نے عمران خان کوآڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ ’عمران خان کو کہتا ہوں کہ کرکٹر ہو کرکٹ کھیلو، عوام کی خدمت عمران خان کا کام نہیں ہے۔ عوام کی خدمت صرف بھٹو والے کرسکتے ہیں۔

وفاقی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے مراد علی شاہ نے کہا کہ یہ کہتے ہیں کہ بجٹ میں کراچی کے لیے 25 ارب روپے رکھے گئے۔ بجٹ کی پوری کتاب میں کہیں 25 ارب روپےنہیں ملے۔ بجٹ میں کراچی کیلئے صرف5 ارب روپے رکھے گئے۔ 5 ارب روپے تو ہم دو دن میں ختم کرلیں گے۔

نواز شریف کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا نواز شریف تم ایک دن بھی کراچی میں نہیں ٹھہرے۔ نواز شریف کا دل کراچی والوں کے ساتھ نہیں دھڑکتا۔

  چئیرمین بلاول بھٹو زرداری جلسہ گاہ میں پہنچ گئے ہیں۔ جہاں پارٹی کارکنان کی جانب سے انکا والہانہ استقبال کیا گیا۔ چئیرمین پیپلز پارٹی کچھ ہی دیر میں جلسہ سے خطاب کرینگے۔ 

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو جلسہ گاہ کیلئے روانہ ہوگئے۔ آصفہ بھٹو زرداری نے بلاول بھٹو کو امام ضامن باندھا، اور  دعا دیکر رخصت کیا۔

دوسری جانب شہید قوال امجد صابری کی والدہ اور بھائی بھی جلسہ گاہ میں پہنچ گئیں، جہاں دونوں کا والہانہ استقبال ہوا۔ 

 کراچی میں ایم کیو ایم کے گڑھ لیاقت آباد میں پیپلزپارٹی کا پنڈال سج گیا۔جیالے،جیالیوں نے بھی تیاری پکڑ لی۔بلاول بھٹو گرمائیں گے کارکنوں کا خون۔ جبکہ پیپلزپارٹی کا ٹینکی گراؤنڈ میں اسٹیج تیار ہوگیا۔سیکورٹی کے بھی سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔ پیپلزپارٹی نے آج ایم کیوایم کے گڑھ لیاقت آبادمیں مورچہ سنبھال لیا ہے۔

واضح رہے کہ  جیالوں کالہوگرمانے کے لیے پارٹی قائدین نے جلسہ گاہ کادورہ کیابلاول بھٹوبھی جلسہ میں جیالوں کالہوگرمائیں گے اور44 سال بعدایم کیوایم کے بت کوگرائیں گے۔

علاوہ ازیں عمران خان لاہورمیں کھلاڑیوں کاجنون جگانے جارہے ہیں اوربلاول بھٹو آج ایم کیوایم کے گڑھ لیاقت آبادمیں پتنگ پرتیربرسائیں گے۔ پیپلزپارٹی نے جلسہ کی بھرپورتیاری کرلی۔ جلسے کی تیاریاں بھی اس وقت عروج پر ہیں ٹنکی گراؤنڈ میں 30ہزارکرسیاں  لگائی جا چکی ہیں جبکہ جلسہ سے پہلے ہی کرکنان کا رش بڑھ گیا۔

پیپلزپارٹی کے نغموں پر جیالوں نے بھر پور رقص بھی کیا۔ جیالیوں نے مہندی لگوائی ۔ پارٹی کے رنگوں کی چوڑیاں بھی پہن لیں ۔ پی پی پی کے کارکنان کا کہنا ہے کہ  بلاول بھٹو زرداری کراچی کی اصل روشنیاں واپس لوٹائیں گے۔ سینیٹر شیری رحمان اور ناز بلوچ بھی جلسے کی تیاریوں کا جائزہ لینے ٹنکی گراؤنڈ پہنچی۔ شیری رحمان کا کہنا تھا کہ آج کراچی میں دم دم مست قلندر ہوگا۔

دوسری جانب جلسہ گاہ میں پیپلزپارٹی کے شہداء کی یاد میں شمعے روشن کی گئیں جبکہ آتش بازی کا بھی مظاہرہ کیا گیا۔ پیپلز پارٹی ایم کیو ایم کے گڑھ لیاقت آباد میں پہلی بار بڑا جلسہ کرنے جارہی ہے۔ ایم کیوایم کا گڑھ سمجھا جانے والا علاقہ ضلع وسطی جہاں ہوگا آج سیاسی پاور شو۔

سینٹرل کے ٹنکی گراونڈ میں پیپلز پارٹی کے جلسے کی تیاریاں آخری مرحلے میں داخل ہوگئی ہیں۔ جلسہ گاہ کی سیکورٹی کے انتظامات انتہائی سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ پولیس کے ساتھ جانثاراں بھی سیکورٹی کے انتظامات سنبھالیں گے۔ جلسہ شام باضابطہ طور پر شروع ہوگا جسے بلاول بھٹو اور دیگر رہنما خطاب کریں گے۔

جیالوں کا کہنا ہے کے بلاول  سینٹرل کے عوام کا دل جیتیں گے۔ پاکستان پیپلز پارٹی کراچی ڈویژن کے صدر سعید غنی کا کہنا تھا کے بلاول عوام میں محبتوں کا پیغام دیں گے۔ جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی عام انتخابات کے حوالے سے عوامی رابطہ مہم کا آغاز بھی ٹنکی گراونڈ سے کرے گی ۔