مہلت اب ختم، ڈی جی آئی ایس پی آر کی پی ٹی ایم کو وراننگ



اسلام آباد(24نیوز) میڈیا بریفنگ کے دوران میجر جنرل آصف غفور نے پشتون تحفظ موومنٹ ( پی ٹی ایم ) کے حوالے سے تفصیلی گفتگو کی ۔ کہا پی ٹی ایم کو دی گئی مہلت اب ختم ہوگئی، انہوں نے جتنی آزادی لینی تھی لے لی۔ساتھ ہی پی ٹی ایم سے کچھ سوالات بھی کر لیے۔

ڈی جی آئی ایس پی آرمیجرجنرل آصف غفورنے پی ٹی ایم سے سوالات کیے کہ جب گلےکاٹ کرفٹبال کھیلاجارہاتھا, اس وقت پی ٹی ایم کہاں تھی؟ ٹی ٹی پی اور پی ٹی ایم کابیانیہ ایک ہی کیوں ہے؟ آپ فوج سے کس بدلے کی بات کرتے ہو؟ ملک سےباہرجاکرہراس بندےسے کیوں ملتےہیں جوپاک فوج کیخلاف بات کرتاہے؟ آپ ریاست پاکستان کاحصہ ہیں یاافغانستان کا؟ 22مارچ 2018کواین ڈی ایس نے پی ٹی ایم کوکتنے پیسےدیئے اور کہاں دئیے؟ منظورپشتین کاکون سارشتہ داربھارتی قونصل خانے گیا. انہوں نے کہا کہ پی ٹی ایم سےسوالوں کے جواب قانونی طریقے سے لیں گے۔

انہوں نے پی ٹی ایم کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ جب پی ٹی ایم بنی تو آرمی چیف نے مجھے کہا کہ ان سے بات کریں،میں نے ان سے بات کی،آرمی چیف نے ہدایت کی تھی کہ یہ سخت بات بھی کریں تو ان سے نرمی سے پیش آئیں،میری محسن داوڑ سے ملاقات ہوئی ، انہوں نے تین مطالبات پیش کیے،ان میں ایک مائنز ہٹانے کا تھا، 45فیصد علاقے کو کلئیر کردیا ہے، مزید کام جاری ہے، مائنز کو ہٹانے میں پاک فوج اور عام افراد کانقصان بھی ہوا۔دوسری ڈیمانڈ چیک پوسٹوں کا ہے،کہتے ہیں دوسرے صوبوں کے فوجی ہٹائیں جائیں،یہ پاکستان کی فوج ہے ، یہاں ہرصوبے کے فوجی نے شہادت دی ہے،جب یہ شہید ہوئے تب محسن داوڑ،منظور پشتین کہاں تھے۔تیسرا مطالبہ لاپتہ افراد کا ہے،اس کا بھی حل نکال رہے ہیں۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔