پاکستان کے نام زندگی وقف کر نے والے سپاہی کی دل دہلا دینے والی داستان

پاکستان کے نام زندگی وقف کر نے والے سپاہی کی دل دہلا دینے والی داستان


24نیوز:وطن کے ان سپوتوں کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا جنہوں نے مادر وطن کی خاطر تن من دھن کی بازی لگا دی، سپاہی مقبول حسین آج ہم میں نہیں رہے لیکن پوری قوم اس جوان کی وطن کیلئے محبت کو سلام پیش کرتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق بھارت سے آنے والے تمام قیدیوں کو ان کی منزل کی طرف روانہ کر دیا گیا لیکن اس خاموش سپاہی کو بلقیس ایدھی سینٹر بھیج دیا گیا۔اس کے لواحقین کو تلاش کرنے کی کوشش کی گئی تو اس کی بہن کا پتہ چلا، جس کا ایک بیٹا ریٹائرڈ فوجی تھا۔ بھانجے کو بھارت سے آنے والے قیدوں کے بارے پتہ چلا، تو وہ اپنے ماموں کو تلاش کرنے ایدھی سینٹر پہنچ گیا۔ مختلف علامات اور نشانات سے اپنے ماموں کی شناخت کی اور یوں مقبول حسین اپنے خاندان آملا۔
دشمن کی قید میں سپاہی مقبول حسین نے جو اذیتیں برداشت کیں ان کا ذکر دل دہلا دیتا ہے۔مقبول حسین کو مارا پیٹا گیا، ناخن اور دانت کھینچ لئے گئےلیکن اس کے دل اور دماغ سے ارض پاک کی محبت نہ نکال سکے۔  سپاہی مقبول حسین کو کشمیر رجمنٹل سینٹر لایا گیا، جہاں اسے کمانڈنٹ کے سامنے پیش کیا گیا۔کمرے میں داخل ہوتے ہی مقبول حسین نے کمانڈنٹ کو سیلوٹ کیا اور ایک کاغذ پر اپنا نمبر 330139 لکھا۔  سپاہی مقبول حسین نے 1965 سے 2005 تک اپنی زندگی کے بہترین 40 سال اندھیری کوٹھری میں گزار دئیےلیکن نہ جھکا نہ ڈرا، 28 اگست 2018 کو یہ عظیم سپاہی اس جہان فانی سے کوچ کر گیا۔ سپاہی مقبول حسین  کی خدمات کے اعتراف میں ستارہ جرات سے نوازا گیا۔