قطری شہزادوں کے شکار کیخلاف وفاق، سیکرٹری خارجہ ، وزیراعلیٰ، کو، نوٹس


اسلام آباد(24 نیوز)قطری شہزادوں کو پاکستان میں شکار سے روکنے کے خلاف درخواست پر اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاق، سیکرٹری خارجہ اور وزیر اعلیٰ پنجاب کو نوٹس جاری کر دیئے ، دس روز میں جواب طلب ۔

تفصیلات کے مطابق قطری شہزادوں کو پاکستان میں شکار سے روکنے کے خلاف درخواست کی سماعت اسلام آباد ہائیکورٹ کے سنگل رکنی بنچ جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب نے کی۔

جی ایم چودھری ایڈووکیٹ نے کہا کہ صرف جواب طلب کرنے سے معاملہ حل نہیں ہوگا ، عدالت حکم امتناع جاری کر دے۔

عدالت نے کیس سے متعلق مزید دستاویزات طلب کر لیے ، جی ایم چودھری ایڈووکیٹ نے کہا کہ پولیس اور سیکورٹی فورسز جرائم کی روک تھام کی بجائے شہزادوں کی سیکیورٹی پر مامور ہیں۔

24 نومبر کو ایک اخبار میں خبر آئی کہ قطر اور یو اے ای کے حکمرانوں اور شہزادوں کو پنجاب حکومت نے شکار کی اجازت دی ہے۔

نوٹیفکیشن کے مطابق امیر قطر شیخ حماد کو ضلع بہاولنگر، وزیر خارجہ قطر حماد بن جاسم کو بھکر جھنگ اور لیہ کا علاقہ الاٹ کیا گیا ہے، محکمہ داخلہ پنجاب نے پرندوں اور جانوروں کی حفاظت ایکٹ 1912 کی خلاف ورزی کی ہے۔

یہ وہی شہزادے ہیں جن کا پانامہ کیس میں مسلسل ذکر ہوا ہے لیکن یہ پیش نہیں ہوئے، جی ایم چودھری ایڈووکیٹ نے مزید کہا کہ عدالت ان دو ملکوں سے ہونے والے معاہدوں کی تفصیلات طلب کرے۔

عدالت شہزادوں کی سیکیورٹی کے لیے اخراجات کی تفصیل بھی طلب کرے، عدالت تفصیل طلب کرے کہ جن غریب کسانوں کی فصلیں تباہ ہوتی ہیں ان کو کتنی رقم ادا کی جاتی ہے ، عدالت محکمہ داخلہ پنجاب کی جانب سے جاری نوٹیفیکیشن کو غیر آئینی قرار دے۔

جی ایم چودھری ایڈووکیٹ نے عدالت سے استدعا کی کہ اس کیس کی سماعت مکمل ہونے تک عدالت قطری شہزادے کو شکار سے روکے ، عدالت نے کیس کی سماعت دس دن تک کے لئے ملتوی کر دی۔