"نواز شریف اور عمران خان کی بھارت سے متعلق پالیسی میں کوئی فرق نہیں"



واہ کینٹ (24نیوز) سابق وزیر داخلہ چودھری نثار علی خان نے کہا ہے کہ نواز شریف اور عمران خان کی بھارت سے متعلق پالیسی میں کوئی فرق نہیں۔ وزیراعظم نے قوم کو ٹرک کی بتی کے پیچھے لگا رکھا ہے حکومتیں ٹویٹ سے نہیں چلائی جاتی۔پیشگوئیاں صرف شیخ رشید کر سکتے ہیں۔ 

سابق وزیر داخلہ چوہدری اچانک لمبے عرصے کے بعد میدان میں آ گئے ہیں اور انہوں نے تحریک انصاف کی حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنا ڈالا ہے۔ واہ کینٹ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری نثار کا کہناتھا کہ موجودہ حکومت نے قرضوں کے ریکارڈ توڑ دیئے ہیں، حکومت ایک دن کچھ اور اگلے دن کچھ اور کہتی ہے۔ ان کا کہناتھا کہ میرا میاں نوازشریف سے قطعی مختلف موقف ہے جس کا اظہار میں نے میٹنگز میں بھی کیا۔

آج مجھے پی ٹی آئی کا موقف ہندوستان کے حوالے سے نظرہی نہیں آتا، آج مجھے نوازشریف اور عمران خان کی انڈین پالیسی میں کوئی فرق نہیں نظر آ رہا، عمران خان کا اب بھارت سے متعلق نظریہ نوازشریف جیسا ہی ہے ۔کیا مودی کی حکومت سے خیر کی توقع کی جاسکتی ہے؟ میں کہتاہوں کہ نہیں ہے اور اگر کسی کو ہے تو بتا دے ، بھارت سے متعلق پی ٹی آئی کا کوئی موقف نظر نہیں آتا۔

چوہدری نثار کا کہناتھا کہ عمران خان کو کوئی سمجھائے کہ حکومتیں ٹویٹ سے نہیں چلتی ہیں، نوازشریف کے کیسز عدالت میں ہیں میں اس پر کوئی تبصرہ نہیں کروں گا۔ انہوں نے کہا کہ اگر ان کا موقف تھا کہ صوبائی ممبران کی تنخواہیں نہیں بڑھنی چاہیے تو یہ اپنی پارٹی کو کہہ دیتے کہ اس معاملے کو اسمبلی میں نہ لائیں لیکن وہ بل پیش بھی ہوا اور پاس بھی ہو گیا ۔ وزیراعظم عمران خان کو مناسب وقت میں فیصلہ کرنا چاہیے تھا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔